مقبوضہ بلوچستان: طلباء رہنماذاکر مجید کی جبری گمشدگی کو 13 سال مکمل، کوئٹہ میں مظاہرہ

0
14

بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائیزیشن آزاد کے لاپتہ سابق وائس چیئرمین کی 13 سالہ جبری گمشدگی و بلوچستان سے لاپتہ افراد کے دن کے حوالے سے کوئٹہ میں احتجاجی مظاہرہ کیا گیا، مظاہرے میں لاپتہ افراد کے لواحقین، سیاسی و سماجی تں طیموں کے رہنماؤں کارکنان سمیت، طلباء نے بڑی تعداد میں شریک ہوئے۔

مظاہرے میں لاپتہ سیاسی رہنماء زاکر مجید بلوچ کی والدہ، لاپتہ انسانی حقوق کے کارکن راشد حسین کی والدہ، لاپتہ کفایت اللہ کی اہلیہ، لاپتہ سجاد کے ہمشیرہ، خضدار کے رہائشی لاپتہ آصف اور رشید کے ہمشیرہ سائرہ بلوچ، نوشکی سے جبری گمشدگی کے شکار نصیب اللہ کے لواحقین، کوئٹہ سے جبری گمشدگی کے شکار انجینئر ظہیر بلوچ کے ہمشیرہ سمیت دیگر لاپتہ افراد کی لواحقین شریک ہوئیں۔

مظاہرین سے گفتگو کرتے ہوئے زاکر مجید کی والدہ کا کہنا تھا کہ میرے بیٹے زاکر مجید کو لاپتہ کئے گئے سالوں بیت گئے لیکن آج تک اسے کسی عدالت میں پیش نہیں کیا گیا- زاکر مجید کی والدہ نے کہا میں پوچھنا چاہتی ہوں کہ میرے بیٹھے کا گناہ کیا ہے اذیت کے تیرہ سالہ طویل انتظار کے باوجود میرے بیٹھے کو رہا نہیں کیا جارہا-

ذاکر مجید کی والدہ کا کہنا تھا کہ میرے بیٹے کا گناہ ایک سیاسی ورکر ہونا ہے اپنے حق کے لئے آواز اٹھانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ذاکر خضدار سے پہلے لاپتہ شخص ہیں، لاپتہ افراد کی کیمپ زاکر کی بازیابی کے لئے قائم ہوئی تھی آج اس میں ہزاروں بلوچ بچوں کی تصاویر موجود ہیں جنھیں اسی طرح لاقانونیت میں لاپتہ کردیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب تک زندہ ہوں بیٹے کی بازیابی کے لئے جہدو جہد کرتی رہونگی ہمارے لئے اس کے علاوہ کوئی راستہ نہیں یہاں کے نمائندے اپنے ووٹ کی سیاست کرتے ہیں لیکن ہمارے بچوں کے لئے آواز نہیں اٹھاتے۔مظاہرین میں موجود چار ماہ قبل بلوچستان کے علاقے منگچر سے جبری گمشدگی کا شکار ہونے والے کفایت اللہ کی اہلیہ نے بتایا کہ کفایت اللہ کو ریاستی اداروں نے میرے سامنے حراست بعد لاپتہ کردیا تھا۔ میرے دو چھوٹے بچے ہیں اوہ وہ خود بیمار ہیں – کفایت اللہ کی اہلیہ نے شوہر کی بازیابی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ انکی شوہر ایک استاد ہیں انہوں نے کوئی غیرقانونی عمل نہیں کیا اگر ان پر کوئی جرم ہے تو عدالت میں لاکر پیش کیا جائے۔

لاپتہ بلوچ کارکن راشد حسین کی والدہ نے مظاہرین سے گفتگو میں بتایا کہ انکے بیٹے کے جبری گمشدگی کو چار سال سے زائد کا عرصہ مکمل ہونے کو ہے۔ انہوں نے کہا کہ رواں سال 21 جون کو راشد کے پاکستان حوالگی و گمشدگی کو تین سال مکمل ہونے والے ہیں جس کی خلاف کوئٹہ پریس کلب سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا جائے گا-راشد حسین کی والدہ نے مظاہرین سے درخواست کی ہے کہ وہ 21 جون کو ہونے والے مظاہرہ میں شرکت کرکے بیٹے کی بازیابی میں انکی آواز بنیں۔

مظاہرین میں سعیدہ بلوچ بھی شریک تھی جن کے مطابق انکے بھائی سجاد احمد، اور بھتیجے ظہور احمد کو ریاستی اداروں نے کوئٹہ سے حراست میں لیکر لاپتہ کردیا ہے، مظاہرین سے گفتگو میں سعیدہ بلوچ نے کہا کہ لاپتہ افراد کے درد کو صرف لاپتہ افراد کی لواحقین سمجھ سکتے ہیں ہمارے یہاں مائیں اس امید سے راتوں کو دروازے بند نہیں کرتے کہ انکے بچے شاید بازیاب ہوکر آجائیں،انہوں نے کہا پاکستان کی اپنی ہی آئین جبری گمشدگیوں کی اجازت نہیں دیتی اگر لاپتہ افراد پر کوئی جرم ہے تو اپنے ہی عدلالتوں میں لاکر احتساب کریں یہ کیسی ریاست ہے کہ بلوچ ماؤں کی آنسو اسے نظر نہیں آتے ہیں۔

لاپتہ ظہیر بلوچ کی ہمشیرہ عظمیٰ بلوچ نے کہا کہ مجھے بتایا جائے کہ ہم اپنے بھائی کو کہاں تلاش کریں، یہ آٹھ ماہ نہیں آٹھ سال ہوگئے۔ ہمارے لئے بھائی پر کوئی جرم عائد ہوتی ہے تو عدالتوں میں پیش کرکے انصاف فراہم کیا جائے،نوشکی سے حراست بعد لاپتہ نصیب اللہ کے والدہ نے بھی مظاہرین سے انکے بیٹے کی بازیابی میں کردار ادا کرنے کی درخواست کی ہے،سائرہ بلوچ کا کہنا تھا کہ انکے بھائی اور کزن آصف و رشید کو نوشکی سے پکنک کے دوران لاپتہ کردیا گیا تھا جس کے بعد سیکورٹی فورسز نے انکی گرفتاری تصدیق بھی کی تھی تاہم انہیں کسی عدالت میں پیش نہیں کیا گیا بھائی اور کزن کی غیر قانونی حراست و جبری گمشدگی کے خلاف انصاف کے ہر دروازے کو کھٹکھٹایا لیکن انصاف نہی ملی۔

اس موقع پر لواحقین سے گفتگو میں ماما قدیر بلوچ نے کہا کہ لاپتہ افراد کی بازیابی کے لئے اس کیمپ کی بنیاد زاکر مجید کی گمشدگی کے دوران انکی بہن فرزانہ مجید نے قائم تھی اور وہیں سے ہم نے اس جہدو جہد کا آغاز کیا۔ ماما قدیر بلوچ نے کہا کہ اس طویل جہدو جہد میں کئی ساتھی ہمارے شہید ہوئے لاپتہ افراد کے بازیابی تک ہم اپنی جہدو جہد جاری رکھیں گے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں