پاک فوج نے پنجگور میں بلوچ خواتین کے ساتھ اجتماعی جنسی زیادتی کیا – ویویک سنہا , ترجمہ غفور احمد

0
321

بلوچستان میں جدید ترین بندوقوں کی برانڈنگ کرنے والے تھکاوٹ میں پاکستانی فوجی مرد کیا کرتے ہیں؟ وہ جنسی زیادتی کرتے ہیں۔ ہاں آپ نے اسے صحیح پڑھا۔ جنسی تشدد ہمیشہ سے ہی پاک فوج کا ایک مہلک ہتھیار رہا ہے جس کی آزمائش اس نے متعدد بار کی ہے۔ انہوں نے اسے ( بنگلہ دیش) پر استعمال کی ا اور اب بلوچستان کے خلاف۔

بلوچوں کی متعدد خواتین کم عمر لڑکیوں اور لڑکوں کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا جاتا ہے اور انہیں اغوا کیا جاتا ہے کہ وہ چھاؤنی میں جنسی غلام کی حیثیت سے رکھے جاتے ہیں اور انہیں پاکستانی فوجی اہلکاروں سی پیک (پاک چین اقتصادی راہداری) کے چینی ٹھیکیداروں کی خدمت کرنے کے لئے بنایا جاتا ہے۔ سی پیک زون میں یہ فوجی چھاؤنی جنسی تشدد کے اڈوں کی طرح دوگنا ہوگئی۔

گذشتہ دنوں پاکستان آرمی کے باقاعدہ دستوں اور ان کے حامی کٹھ پتلیوں ڈیتھ اسکواڈ کے ممبروں نے ضلع پنجگور کے علاقے کیلکور میں چھاپہ مارا۔ اس چھاپے کا واحد مقصد بے بس بلوچ لوگوں کو محکوم رکھنا تھا اور اس مقصد کو حاصل کرنے کا اور کیا بہتر طریقہ ہے کہ تمام خواتین پر جنسی زیادتی کی جائے۔ راولپنڈی میں یہ سوچ ہے کہ ایک ایسی جماعت جس کی خواتین کو جنسی تشدد کی گئی ہے وہ آسانی سے اپنے مطالبات پر اتر آئیں گے۔

کیلکور میں زیادہ تر مردوں کو پہلے ہی پاکستانی فرنٹیر کور (ایف سی) اور آئی ایس آئی نے اغوا کیا ہے اور صرف وہی لوگ رہ گئے تھے جو بوڑھے مرد، خواتین اور جوان لڑکے لڑکیاں تھے- اس کے بعد کسی کو اگر شرم آئے تو کہاں سے؟

کیلکور کی تمام خواتین کو پاکستان آرمی کے فوجیوں اور ڈیتھ اسکواڈ کے ممبروں نے گھیر لیا اور ان کے ساتھ زیادتی کی، سات آٹھ سال کی عمر کی لڑکیوں کو بھی نہیں بخشا گیا وہاں نوجوان لڑکیوں اور ان کی ماؤں کے ساتھ ایک دوسرے کے سامنے جنسی زیادتی کی گئی۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ یہ وسیع پیمانے پر جنسی حملہ ضلع پنجگور کے علاقے کیلکورمیں پیش آیا۔

لیکن اچانک پاکستان کیلکور میں چھاپہ اور تمام خواتین پر اجتماعی زیادتی کیوں کریں گے؟ ٹھیک ہے، یہ پہلہ واقعہ نہیں ہے۔ پاکستان شیطانی جنگ کے نظریے کی پیروی کرتے ہیں جہاں جنسی زیادتی کو جنگ کرنے والی آبادی کے خلاف ایک مہلک نفسیاتی آلہ کے طور پر استعمال کرتا ہے۔

انیس سو اکترمیں بنگلہ دیش کی جنگ آزادی کے دوران پاکستان آرمی کے جوانوں کو راولپنڈی کی طرف سے براہ راست حکم تھا کہ وہ بنگلہ دیش میں تمام بنگالی خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی کریں۔ ہر روز فوجیوں سے ان کی بیرکوں میں جنسی زیادتی کی گنتی کے بارے میں پوچھا جاتا تھا۔ راولپنڈی کے پنجابی جرنیلوں کا خیال تھا کہ بنگلہ دیشی خواتین کو پاکستانی فوجیوں کے ذریعہ زیادتی کا نشانہ بنانے کے براہ راست تناسب میں بنگالی ہتھیار ڈالیں گے۔ بنگالیوں نے کبھی ہتھیار نہیں ڈالے ور آج بنگلہ دیش ایک آزاد ملک ہے۔

پاکستانیوں نے اپنی تاریخ سے کبھی نہیں سیکھا۔ اور یہ بڑی حد تک اس لئے ہوا کہ ان تمام پاکستانی فوجیوں پر کبھی بھی مقدمہ نہیں چلایا گیا اور نہ ہی بنگلہ دیش کی ان بدقسمت بنگالی خواتین پر ہونے والے ان کے قابل نفرت جنگی جرائم پر شرمندہ کیا گیا۔ اس نے راولپنڈی کو حوصلہ دیا۔ دنیا کی خاموشی کا مطلب یہ تھا کہ اس وقت کی ہندوستانی حکومت کی طرف سے شملہ معاہدے کے ایک حصے کے طور پر واپس بھیجے جانے کے بعد 93000 پاکستانی جنگ کے قیدیوں نے اس بار بلوچستان میں اپنے مظالم کی تجدید جوش و خروش سے شروع کی۔ 1973 سے لے کر 1977-78 تک پاکستان آرمی کے باقاعدہ افراد بلوچستان میں لوٹ مار قتل اور استثنیٰ کے ساتھ جنسی زیادتی کرتے رہے۔ جنسی حملوں کے بعد بلوچ خواتین کو لاہور کے بدنام زمانہ ریڈ لائٹ ایریا ہیرا منڈی میں فروخت کرنے کے لئے لے جایا گیا۔

بلوچستان میں پاکستان کے طریقہ میں تھوڑی سی تبدیلی آئی۔ بنگلہ دیش کی جنگ راولپنڈی کی 1971 کی مکروہ شکست کے تحت ہوشیار اب بلوچستان میں اپنی مذموم سرگرمیوں کو راڈار سے نیچے رکھنا سیکھ گیا ہے۔ لہذا پہلی بات یہ تھی کہ آزاد میڈیا کو بلوچستان کے دور دراز علاقوں میں جانے پر پابندی عائد کی جائے، اسی طرح انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیموں اور خواتین کے حقوق گروپوں کو بلوچ خواتین سے بات کرنے سے روک دیا گیا۔ کوئی بھی صحافی جو بلوچستان کے اندر جاتا ہے اسے پاکستان آرمی سے اجازت لینے کی ضرورت ہوتی ہے یا ایک گائیڈ کے ذریعے صحافیوں کی وزٹ کرائیجاتی ہے۔ انٹرنیٹ اور موبائل رابطے نہیں ہیں جبکہ جنسی زیادتیاں جاری ہیں۔ دور دراز والے بلوچ علاقوں میں بھی جانے کے کی اجازت نہیں ہے تاکہ کوئی خبر لیک نہ ہو۔

پھر بھی بلوچ نے ہار ماننے سے انکار کردیا ہے۔ پچھلی دہائی کے دوران بلوچستان میں آزادی کی جدوجہد نے فیصلہ کن موڑ لیا ہے۔ بلوچ سرمچارون نےسی پیک ( پاک چین اقتصادی راہداری) کے نام پر بلوچ وسائل کی لوٹ مار کے خلاف اپنی انقلابی سرگرمیاں تیز کردی ہیں اور وہ پاکستانی افواج کا مقابلہ کر رہے اور عزم کے ساتھ لڑ رہے ہیں۔

پاکستانی فوجی اپنے جدید ترین ہتھیاروں کے باوجود گن شپ ہیلی کاپٹر اور لڑاکا طیارے بلوچ سرمچارون کی ہمت و جرات کا مقابلہ نہیں کرسکتے ہیں۔ اسی پس منظر میں راولپنڈی کے پنجابی جرنیلوں نے بلوچستان میں بنگلہ دیش کی بدانتظامی کو دہرانے کی کوشش کی ہے۔ اور اس طرح بلوچ عورتوں کی جسم ایک بار پھر پاکستان آرمی کے لئے میدان جنگ بن گئی ہے۔
کیلکور حملے کے دوران پنجگور کے آس پاس کے علاقوں کو گھیرے میں لے لیا گیا۔ انٹرنیٹ اور موبائل رابطہ بند کردیئے گئے۔ غریب بلوچ خواتین اور لڑکیوں کی جنسی زیادتی اور تذلیل کی گئی۔ اس طرح جنسی زیادتی کے دوران ایک بوڑھا بلوچ باپ پیری اپنی بیٹی کو بچانے کے لئے کھڑا ہوا۔ خالی ہاتھ باپ نے اس بھاری ہتھیاروں سےمسلح پاکستانی فوجیوں کا مقابلہ خالی ہاتھوں سے کیا لیکن جلد ہی اس پر قابو پالیا گیا اور اسے گولی مار کر ہلاک کردیا گیا۔ پیری کی بیٹی کو اس کے والد کی لاش کے دہانے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا گیا۔

نور جان، ایک قابل فخر بلوچ والد جس نے پاکستانی فوجیوں کی طرف سے جب اپنی بیٹی کو آرمی چھاؤنی بھیجنے کے لئے کہاگیا تو خوشی سے اپنی جان دینے کا انتخاب کیا۔ ہوشاب میں پاکستانی فوجیوں کے ہاتھوں گیارہ سالہ امیر مراد پر جنسی زیادتی کی کہانی سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ نوجوان بلوچ لڑکے بھی محفوظ نہیں ہیں۔

اسی طرح کے جنسی زیادتی کی اطلاع 2017 میں ضلع آواران کےعلاقے مشکے میں بھی ہوئے جہاں ایک خاندان کے بارہ لوگ ابھی بھی پاکستانی آرمی کی تحویل میں ہیں۔ رواں سال جنوری میں حکیم بلوچ کے خاندان کو مشکے میں ڈیتھ اسکواڈ کے ممبروں کے ہاتھوں چار خواتین کا اجتماعی زیادتی ہوا۔

اس طرح کے معاملات کی فہرست انسانی حقوق اور خواتین کے حقوق کے کارکنوں کے چیمپین کے لئے محض اعدادوشمار ہوسکتی ہے، کیا مہذب دنیا کو راولپنڈی سے سوال نہیں کرنا چاہیئے؟ 1948 میں جب پاکستان نے غیر قانونی طور پر اور زبردستی ایک آزاد قوم بلوچستان پر قبضہ کیا تو دنیا نے دوسری طرح سے دیکھا۔ جب سے دنیا معصوم بلوچ لوگوں کے لاپتہ ہونے، جنسی زیادتی اور قتل و غارت گری پر اپنی بہرا خاموشی برقرار رکھے ہوئے ہے۔ اب وقت آگیا ہے کہ ہم اپنے شتر مرغ کی طرح کے نقطہ نظر سے چھٹکارا حاصل کریں اور بلوچستان کو اپنی آزادی حاصل کرنے میں مدد کریں۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں