مقبوضہ بلوچستان: بی ایل ایف نے ضلع کیچ اور آواران میں پاکستانی فورسز پر تین حملوں کی ذمہ داری لے لی

0
13

بلوچستان لبریشن فرنٹ کے ترجمان میجر گہرام بلوچ نے جاری کردہ بیان میں کہا کہ پانچ اگست کی شام سات بجکر تیس منٹ پر ہمارے سرمچاروں نے ضلع ا?واران کے علاقیوادء مشکے،رونجان میں واقع کیمپ کے نزدیک پہاڑی پر واقع چوکی پر اسنائیپر سے حملہ کیا،جس کے نتیجیمیں ایک فوجی اہلکار ہلاک ہوگیا۔حملہ بلوچستان لبریشن فرنٹ کے اسنائپر ٹیم کی جانب سے کیاگیا،اسنائپر ٹیم اپنے جنگی تربیت کا بخوبی استعمال کرتے ہوئے فورسز پر حملہ آور ہوکر بحفاظت نکلے میں کامیاب رہے۔

انہوں نے کہا کہ ضلع کیچ کے علاقے مندحمزوئی بند اورتربت شہر سنگانی سر میں فورسز پر حملے کی ذمہ داری قبول کر لی۔

بلوچستان لبریشن فرنٹ کے ترجمان میجر گہرام بلوچ نے جاری کردہ بیان میں کہا کہ پانچ اگست شام پانچ بجے کی قریب ہمارے سرمچاروں نے ضلع کیچ کیعلاقے مندمیں باگزو حمزوئی بند کے نزدیک کے پہاڑی سلسلوں میں قائم چوکی کے قریب فورسز پر حملہ کیا،جس کے نتیجے میں دو فوجی اہلکار ہلاک ہوگئے۔حملہ بلوچستان لبریشن فرنٹ کے جنگی گشتی ٹیم (Combat Patrol Team) کی جانب سے اس وقت کیا گیا جب فورسز لکڑیاں اکٹھی کرنے کی غرض سے چوکی سینکلے تھے۔ سرمچاروں نے ان پر گھات لگا کر حملہ کیا،حملے کے نتیجے میں دو فوجی اہلکار ہلاک ہوگئے۔ سرمچار گوریلہ تکنیک سے حملہ ا?ورہوکر بحفاظت نکلے میں کامیاب رہے۔بلوچستان لبریشن فرنٹ کے ترجمان میجر گہرام بلوچ نے مزید کہا کے ہمارے سرمچاروں نے پانچ اگست شام بوقت نو بجکر تیس منٹ پر ایک اور حملے میں ضلع کیچ کے مرکزی شہر تربت کے علاقے سنگانی سرمیں بورڈ کے نزدیک قائم چوکی پر خود کار ہتھیاروں سیحملہ کیا،حملے کے نتیجے میں فوجی اہلکار زخمی ہوئے اور مالی نقصان اٹھانا پڑا۔

اربن گوریلہ تکنیک اپناتے ہو ہمارے سرمچار قابض فورسز پر حملہ آوار ہوکر بحفاظت نکلے میں کامیاب رہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں